جمعۃ الوداع اللہ پاک کے

رمضان کے آخری جمعہ میں اس وظیفے کو کرے گا تو جمعۃ الوداع کی بر کتوں سے میرے رب کے فضل و کرم سے اللہ پاک کے ناموں کے اس وظیفے کی بر کت سے اس انسان کی تمام دعائیں قبول ہوں گی تمام حاجا ت پوری ہوں گی اللہ نے چاہا تو اس کے تمام مسائل حل ہو جا ئیں گے اور اس وظیفے کے ساتھ

ساتھ ہم آپ کے ساتھ یہ بھی شئیرکر یں گے کہ قضا عمری اور جمعۃ الوداع میں کیا تعلق ہے تو اگر آپ یہ تمام چیزیں جاننا چاہتے ہیں تو آپ نے ہمارے ساتھ ہی رہنا ہے آج کا ہمارا پہلا وظیفہ ہے اس کو توجہ سے سنیے آپ نے رمضان کے آخری جمعہ کے دن نمازِ عصر ادا کرنے کے بعد وہیں پر بیٹھے رہنا ہے۔ قبلہ رخ وہیں پربیٹھے بیٹھے اللہ تبارل وتعالیٰ یہ تین اسما ء تین اسماؤں کو توجہ سے سنیے پھر ہم نے کیا کر نا ہے وہ بھی سنتے ہیں یا اللہُ یا رحمٰنُ یا رحیمُ تو یہ تین اسوائے ہیں میں نے دو بار بتائے تو نمازِ عصر ادا کرنے کے بعد اگر آپ کا مسجد میں جانے کا موقع ملتا ہے مسجد میں جا کر مرد حضرات نمازِ عصر ادا کر یں اور پھر وہیں پرھ قبلہ رخ ہو کر اور اگر میری بہنیں مجھے سن رہی ہیں تو آپ گھر میں بیٹھ کر جس جگہ نماز پڑھتی ہیں اس جگہ پر نماز پڑھ کر وہیں پر بیٹھے رہنا ہے اور اگر مرد حضرات موقع نہیں ملتا مسجد میں جانے کا جیسے کہ حالات چل رہے ہیں۔ تو آپ گھر پر ہی بیٹھے رہیں قبلہ رخ ہو کر اور پھر تینوں اسماؤں کو پڑھ

لیں اور پھر اللہ سے دعا مانگیں۔ سوال میں مذکورہ طریقے سے چار رکعات نماز پڑھنے سے قضا نمازیں ادا نہیں ہوتیں، بلکہ زندگی میں قضا نمازوں سے بری الذمہ ہونے کے لیے ان کی ادائیگی کے علاوہ کوئی صورت نہیں، خدانخواستہ زندگی میں ادا نہ کرسکے تو مرنے سے پہلے ایک تہائی ترکے میں سے نمازوں کا فدیہ ادا کرنے کی وصیت کرجائے۔آپ نے جو روایت لکھی ہے، یہ ثابت نہیں ہے، ان الفاظ کے قریب ایک روایت کا تذکرہ ایک من گھڑت روایت میں ملتا ہے، محدثین نے ایسی روایات کو رد کیا ہے۔ لہٰذا اسے بطورِ روایت بیان کرنا اور اس پر عمل کرنا جائز نہیں ہے سورت بقرہ کی آیت ہے والھکم الہ واحد لا الہ الا ھو الرحمن الرحیم تم سب کا معبود ایک ہی ہے اس کے سوا کوئی معبود بر حق نہیں وہ بہت رحم کرنے والا اور بڑا مہربان ہے اسم بنت یزید بھی بیان کرتی ہیں نبی اکرم نے فرمایا اللّه کا اسم اعظم ان ٢ آیات میں ہے اللّه لا الہ الا والھکم الہ واحد یہ وہ اسم گرامی ہے جس کے پڑھنے کے بعد اللّه سے جو بھی دعا کی جاتی ہے وہ قبول ہوتی ہے کرنا یہ ہے کہ رمضان کا آخری جمعہ پڑھ لینے کے بعد ٢ رکعت نماز نفل ادا کرنے ہی